یہ تین دانے خ و ن پیدا کرنے کا خزانہ ہیں ہڈیوں اور پٹھوں کو فولاد کی طرح مضبوط بنائیں

Sharing is caring!خ و ن کی کمی کا مسئلہ بھی عام ہوچکا ہے اور ہر چوتھا شخص خ و ن کی کمی خ و ن میں سرخ ذرات کی کمی یا پھر جسم کے اندر پائی جانیوالی آئرن کی کمی سے پریشان نظر آتا ہے جب بھی ہمارے جسم میں خ و ن کی کمی کا مسئلہ پیدا ہوتا ہے اس سے عام جسمانی کمزوری کیساتھ مردانہ طاقت میں کمی آنے لگتی ہے ۔ چہرے کی رنگت پھیکی اور بے رونق ہوجاتی ہے ۔ بنا کام کیے ہی آدمی جسم میں شدید تھکن اور سستی محسوس کرتا ہے

تھوڑا سا چلنے سے سانس پھول جاتی ہے ۔ کام کاج کرنے کو جی نہیں کرتاہے ۔ طبیعت میں چڑچڑا پن اور ٹینشن جیسے مسائل جنم لینے لگتے ہیں بھوک کم ہوجاتی ہے کبھی چکر اور کبھی نیند میں بھی کمی واقع ہوجاتی ہے ایسے مسائل سے نجات پانے کیلئے آج ہم آپ کو ایسی ریمڈی بتائیں گے ۔ جس کے کچھ دنوں کے استعمال سے اچھی خاصی مقدار میں نیا او ر صاف خ و ن آپ کے جسم میں پیدا ہونا شروع ہوجائیگا تھوڑے دنوں میں خ و ن آپ کے چہرے پر واضح طور پر نظر آنے لگے گا ۔ اس نسخہ کے استعمال کے ساتھ ہی آپ روزانہ کی خوراک میں ایک سیب کھانا شروع کردیں انگور کا موسم ہو تو انگور کھائیں ۔ اس کے علاوہ انار کاجوس،چقندر کی سلاد اور کھجور کو دودھ کے ساتھ ملا کر کھائیں

تھوڑے دنوں میں آپ کو زیادہ بہتر رزلٹ حاصل ہوسکتا ہے ۔ خ و ن پیدا کرنیوالے اس نسخہ کے استعمال کرنے سے آپ کی مردانہ قوت میں اضافہ ہوگا ۔ پٹھوں کے درد اس کے استعمال سے دور ہوجائیں گے ۔ ہڈیاں درد کرتی ہیں یا کیلشیم کی کمی کی شکایت ہو تو وہ بھی اس سے جاتی رہے گی ۔ اعصابی کمزوری سے نجات دلانے میں بھی یہ نسخہ بہت فائدہ مند ثابت ہوگا ۔ جن لوگوں کے بال کمزور ہوکر گرنے لگتے ہیں۔

دماغ کمزور ہے یادداشت اور حافظہ مضبوط نہیں ہے یا پھر نظر کی کمزوری کا مسئلہ ہے وہ بھی اس نسخہ سے دور ہوجاتا ہے ۔ جو لوگ وزن بڑھانا چاہتا ہے اور دُبلے پن سے چھٹکارہ پانے چاہتے ہیں یا ایسے افراد جو جِم جاتے ہیں ایسے افراد کیلئے یہ بہترین چیز ہے اس کیلئے آپ نے تین عدد سیاہ رنگ کی لمبی کھجوریں لیکر ان کو درمیان میں سے دو ٹکڑے کرکے گٹھلی نکال لینی ہے ان کھجوروں کے اندر مکھن بھر کر رکھ لیں اور ان کو صبح سویرے خالی پیٹ ایک گلاس نیم گرم دودھ کے ہمراہ استعمال کریں کچھ دن مسلسل استعمال کرکے دیکھیں انتہائی مفید اور فائدہ مند نسخہ ہے ۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.